139

پاکستانی طلبا ”آئس” نامی نشے کے عادی ہو گئے

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 17 دسمبر2018ء) : پاکستان کی کئی مشہور یونیورسٹیوں سمیت تعلیمی اداروں میں نشے کے عادی طلبا و طالبات کی تعداد روز بروز بڑھتی جا رہی ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق پاکستانی طلبا سب سے زیادہ جس نشے کا استعمال کرتے ہیں وہ کرسٹل میتھ ہے جسے عام زبان میں ”آئس” کہا جاتا ہے۔ یونیورسٹیوں سمیت دیگر تعلیمی اداروں میں بھی ”آئس” نامی اس نشے کا استعمال دن بدن بڑھتا جا رہا ہے۔ ”آئس” سپلائی کرنے والے منشیات فروش طلبا کو یہ جھانسہ دے کر اس نشے کا عادی بناتے ہیں کہ اس سے ان کی ذہنی صلاحیت میں اضافہ اور یاد داشت اچھی ہو گی۔ اس نشے کے عادی افراد 10 سے 12 گھنٹے حیرت انگیز حد تک چُست رہتے ہیں اور جاگتے رہتے ہیں ، اسی وجہ سے طلبا کو کئی جسمانی اور نفسیاتی مسائل سے دوچار ہونا پڑتا ہے۔

”آئس” نامی یہ نشہ کسی بھی شخص کو اپنا اس قدر عادی بنا لیتا ہے کہ اگر کوئی نشے کا عادی شخص خود بھی اس سے چھُٹکارا حاصل کرنا چاہے تو ایسا نہیں کر سکتا۔ لہٰذا تمام طلبا کو ہدایت کی جاتی ہے کہ صرف گریڈز لینے اور ذہنی صلاحیت بڑھانے کی خاطر ہرگز اس نشے کا عادی نہ بنیں اور منشیات سے گریز کریں۔گذشتہ برس شہر اقتدار کے تعلیمی اداروں میں منشیات کا استعمال کافی عام ہو گیا تھا جس نے نوجوان نسل کو اپنی لپیٹ میں لے لیا تھا۔ جان لیوا نشے کے بے دریغ استعمال کے لیے منشیات فروشوں نے نشہ کرنے کے نت نئے طریقے بھی ڈھونڈ نکالے۔ آئس کے علاوہ آکسیجن شاٹس اور پار ٹی ڈرگز نوجوان نسل میں زیادہ مقبول ہیں۔ تعلیمی اداروں میں منشیات کا بے دریغ استعمال نوجوان نسل کے مستقبل کی تباہی کا باعث بن رہا ہے۔ 3500 سے 4000 روپے میں ایک گرام منشیات خرید کر 20 سے 25 افراد اپنے نشے کی لت پوری کر لیتے ہیں۔ یہی نہیں حکومت کی جانب سے شراب، کوکین، گردہ اور چرس کی تعلیمی اداروں کے اندر سپلائی اور استعمال کو روکنے کے اقدامات کے بعد نوجوان نسل کو برباد کرنے والے مافیا نےچاکلیٹ ،چیونگم، لالی پاپ،انرجی ڈرنکس اور خشک دودھ کی صورت میں نئے نشہ کو تعلیمی اداروں میں متعارف کروایا گیا تھا۔چیونگم اور چاکلیٹ میں ایسے کیمیکل موجود ہیں جس کے استعمال سے نشہ تو ہوتا ہے مگر دماغ سُن ہوجاتا ہے۔ ایک رپورٹ کےمطابق یہ نشہ آور چیزیں تھائی لینڈ، بھارت اور سنگاپور سے اسمگل ہوکر پاکستان آ رہی ہیں۔ اس حوالے سے ڈاکٹرز نے اسکولوں ،کالجوں اور یونیورسٹیوں کے طلبا کے والدین کو تلقین کی ہے کہ وہ اپنے بچوں پر خصوصی نظر رکھیں اور ان کے دوست احباب سے متعلق بھی پوری طرح باخبر رہیں تاکہ وہ اپنے بچے کو نشے جیسی لعنت کا عادی بننے سے بچا سکیں۔

یہ فرضی تحریر اس تھیم کے ساتھ ملنے والے ڈیمو ڈیٹا کے لئے ہے۔ اس ڈیمو ڈیٹا کو آپ اپنے تھیم سیٹنگز پینل سے اپنی ویب سائٹ پر حاصل کر سکتے ہیں۔ تاکہ آپ کو ابتدائی مراحل کے لئے پہلے سے تخلیق شدہ ڈیٹا مل جائے اور آپ کو تھیم لگانے میں آسانی ہو اور آپ اس کی کارکردگی دیکھ سکیں۔

اس تھیم کو لگانے مٰیں اگر آپ کو کوئی دشواری پیش آئے تو آپ ہماری ویب سائٹ پر آ کر مدد طلب کر سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ اس تھیم کو لگانے کا مکمل طریقہ کار ویڈیو گائڈ میں بتایا گیا ہے جو کے آپ ہمارے یوٹیوب چینل پر ملاحظہ فرما سکتے ہیں۔

اس تھیم کے اپڈیٹس بلکل مفت ہیں، آپ ہمارے فیس بک پیج، ٹویٹر پروفائیل اور ہمارے بلاگ کو ملاحظہ فرماتے رہیں تاکہ آپ اس کے اپڈیٹس سے آگاہ رہ سکیں۔

اس ڈیمو ڈیٹا میں موجود تمام خبریں فرضی ہیں اور ان کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں، اس ڈیٹا کو صرف اور صرف تھیم کی کارکردگی دکھانے کے لئے لکھا گیا ہے۔ اور اس میں استعمال ہونے والی تصاویر اور ویڈیوز انٹرنیٹ سے لی گئی ہیں جن ک جملہ حقوق ان ک اصل مالکان کے پاس محفوظ ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں